Monday, 20th October 2014    Home :: Bookmark :: Al Quran :: Media Library :: Books Library :: Question Answers   
Home
Al Quran
Media Library
Masjid e Habib Q/A
Dars e Bahar e Shariat
Dars e Fiqah
Speeches
Books Library
English Books
News & Events
Arabic Books
Urdu Books
Question Answers
Khazeena Eman
Personalities
Islamic Events
English Articles
Urdu Articles
Sister Section
Past Events
About us

 Printer Friendly  Send to Friend  

Rabiul Saani (Urdu)

اسلامی سال کا چوتھا مہینہ ۔۔۔ ربیع الثانی شریف
 

اسلامی سال کے چوتھے مہینہ کا نام ربیع الآخر ہے، اس کی وجہ تسمیہ یہ ہے کہ اس مہینہ کا نام رکھنے کے وقت موسم ربیع کا آخر تھا اس لئے اس ماہ کا نام ربیع الآخر رکھا گیا۔

گیارہویں شریف:

اسی مہینہ مبارک میں سیدنا و مولانا القطب الفرد الغوث شیخ الاسلام و المسلمین غوث الثقلین الشیخ محی الدین محمد عبدالقادر الحسنی و الحسینی الجیلانی الحنبلی المعروف پیرانِ پیر ، پیر دستگیر رضی اللہ تعالیٰ عنہ، کا وصال مبارک ہوا۔ آپ کے وصال پاک کی تاریخوں میں ذرا سا اختلاف ہے ۔ بعض نے نویں، بعض نے سترہویں اور بعض نے گیارہویں ربیع الآخر کو وصال شریف بتایا ہے۔ محقق علی الاطلاق شیخ عبدالحق محدث دہلوی علیہ الرحمۃ اپنی شہرہ آفاق تصنیف ''ماثبت من السنّہ'' کے صفحہ ١٢٣، پر رقمطراز ہیں:

وَقَدْ اشْتَہَرَ فِیْ دِیَارِ نَا ہٰذَا الْیَوْمُ الْحَادِیْ عَشَرَ وَہُوَ الْمُتَعَارِفُ عِنْدَ مَشَائِخِنَا مِنْ اَہْلَ الْہِنْدِ مِنْ اَوْلَادِہ
(ترجمہ) ہمارے ملک میں آج کل آپ کی تاریخ وصال ، گیارہویں تاریخ کو مشہور ہے اور ہمارے ہندوستان کے مشائخ اور ان کی اولاد کے نزدیک یہی متعارف و مشہور ہے۔ (ماثبت من السنّہ، صفحہ ١٢٣)

سال بھر اس تاریخ کو لوگ سرکارِ غوثیت کا عرس مبارک کرتے ہیں جس کو بڑی گیاہویں کہا جاتا ہے۔ اور اسی مناسبت سے اس ماہ کو ''گیارہویں شریف '' کا مہینہ بھی کہا جاتا ہے۔ (فضائل الایام والشہو، صفحہ ٣٦٠ ، ٣٦١)

 

اسم ماہِ مبارک کے نوافل و عبادات


چار رکعت نوافل:

اس مہینہ کی پہلی اور پندرہویں اور انتیسویں تاریخوں میں جو کوئی چار رکعت نفل پڑھے اور ہر رکعت میں الحمد شریف کے بعد قُل ہُوَ اللّٰہُ اَحَد پانچ پانچ مرتبہ پڑھے ۔ تو اس کے لئے ہزار نیکیاں لکھی جاتی ہیں۔ اور ہزار بدیاں معاف کی جاتی ہیں اور اس کے لئے چار حوریں پیدا ہوتی ہیں۔ (''فضائل الایام والشہور ''صفحہ ٣٧٥ بحوالہ ''جواہر غیبی'' )

تیسری شب کے نوافل:

ربیع الثانی کے مہینے کی تیسری شب کو چار رکعت نماز ادا کرے ، قرآن حکیم میں سے جو کچھ یاد ہے پڑھے ۔ سلام کے بعد یا بدوح یا بدیع کہے۔ ( ''لطائف اشرفی ''صفحہ ٣٤١)

پندرہویں شب کے نوافل:

اس ماہ کی پندرہ کو چاشت کے بعد چودہ رکعتیں دو، دو رکعات ادا کرے ۔ اس نماز کی ہر رکعت میں فاتحہ کے بعد سورہ اقرأ سات بار پڑھے۔ (حوالہ مذکورہ بالا)

ماہ ربیع الثانی میں رونما ہونے والے اہم واقعات


٭ واقعہ یرموک۔۔۔۔۔۔١٥ھ ٭ تعمیر بصرہ۔۔۔۔۔۔١٦ھ ٭ واقعہ نہاوند۔۔۔۔۔۔٢١ھ ٭ فتح طرابلس ۔۔۔۔۔۔ ٢٢ھ ٭ وفات ابو درداء رضی اللہ تعالی عنہ ۔۔۔۔۔۔٣٢ھ ٭ وفات اشعث کندی رضی اللہ تعالی عنہ ۔۔۔۔۔۔٤٠ھ ٭ تکمیل فتح سوڈان ۔۔۔۔۔۔ ٤٣ھ ٭ وفات کعب بن مالک ۔۔۔۔۔۔٥٠ھ ٭ سمر قند کا محاصرہ۔۔۔۔۔۔٥٦ھ ٭ وفات عبید اللہ بن زیاد۔۔۔۔۔۔٦٧ھ ٭ وفات عبداللہ بن العباص رضی اللہ تعالی عنہ ۔۔۔۔۔۔٦٨ھ ٭ وفات عاصم بن عمر فاروق رضی اللہ تعالی عنہ ۔۔۔۔۔۔ ٧٠ھ ٭ وفات الاحنف۔۔۔۔۔۔٧٢ھ ٭ وفات سلمہ بن الاکوع۔۔۔۔۔۔٧٤ھ ٭ وفات عبداللہ بن جعفر طیار رضی اللہ تعالی عنہ۔۔۔۔۔۔٨٠ھ ٭ عراق میں بغاوت۔۔۔۔۔۔٨٣ھ ٭ فتح ارمینیا۔۔۔۔۔۔٨٥ھ ٭ فتح صاغان ۔۔۔۔۔۔ ٨٦ھ ٭ فتح صغد۔۔۔۔۔۔٨٨ھ ٭ وفات خارجہ بن زید رضی اللہ تعالی عنہ ۔۔۔۔۔۔١٠٠ھ ٭ وفات یزید بن ابی مسلم ثقفی ۔۔۔۔۔۔ ١٠٢ھ ٭ جنگ بہرزان۔۔۔۔۔۔١٠٤ھ ٭ وفات فاطمہ بنتِ حسن رضی اللہ تعالی عنہ ۔۔۔۔۔۔١٠٥ھ ٭ وفت طاؤس بن کیسان۔۔۔۔۔۔١٠٦ھ ٭ وفات عدی بن ثابت المضر۔۔۔۔۔۔١١٦ھ ٭ وفات حماد الکوفی علیہ الرحمۃ ۔۔۔۔۔۔ ١٢٠ھ ٭ مروان کی فتح اور تومان شاہ کی شکست۔۔۔۔۔۔١٢١ھ ٭ وفات خلیفہ ہشام ، خلافت ولید ثانی ۔۔۔۔۔۔ ١٢٥ھ ٭ السفاح کے ہاتھ پر بیعت خلافت عباسیہ کی ابتداء ۔۔۔۔۔۔١٣٢ھ ٭ وفات عبداللہ بن طاؤس ۔۔۔۔۔۔ ١٣٣ھ ٭ موسیٰ بن کعب سندھ آیا۔۔۔۔۔۔١٣٤ھ ٭ وفات عطاء خراسانی۔۔۔۔۔۔١٣٥ھ ٭ وفات خالد بن یزید المصری۔۔۔۔۔۔١٣٩ھ ٭ ادریس بانی دولت ادریسی مرکش آیا ۔۔۔۔۔۔١٤٦ھ ٭ وفات ابن جریح الرومی۔۔۔۔۔۔١٥٠ھ ٭ وفات عباد الناجی۔۔۔۔۔۔١٥٢ھ ٭ افریقہ میں اباضیوں کا استصال۔۔۔۔۔۔١٥٤ھ ٭ وفات امیر یزید بن ابی صفرہ۔۔۔۔۔۔١٧١ھ ٭ وفات امام مالک علیہ الرحمۃ۔۔۔۔۔۔١٧٩ھ ٭ وفات قاضی ابو یوسف ۔۔۔۔۔۔١٨٢ھ ٭ قتل ہرشمہ۔۔۔۔۔۔٢٠٠ھ ٭ ظہور بابک خرمی۔۔۔۔۔۔٢٠١ھ ٭ وفات حسن بن زیادہ اللوٹوی ، تلمیذ امام اعظم ابو حنیفہ۔۔۔۔۔۔٢٠٤ھ ٭ وفات روح بن عبادہ۔۔۔۔۔۔٢٠٥ھ ٭ مکہ مکرمہ میں سیلاب آیا۔۔۔۔۔۔٢٠٨ھ ٭ وفات سعید بن زید اللغوی۔۔۔۔۔۔٢١٥ھ ٭ وفات بشر المریسی۔۔۔۔۔۔٢١٨ھ ٭ وفات فضل بن وکین۔۔۔۔۔۔٢١٩ھ ٭ وفات ابو عبدالرحمں القعبنی۔۔۔۔۔۔٢٢١ھ ٭ وفات صدقہ المروزی۔۔۔۔۔۔٢٢٣ھ ٭ وفات ابو بکر بن ابی شنبہ۔۔۔۔۔۔٢٣٥ھ ٭ وفات عبدالرحمن الثانی و حکومت محمد الاول الاموی۔۔۔۔۔۔٢٣٨ھ ٭ طپریہ میں شدید زلزلہ۔۔۔۔۔۔٢٣٩ھ ٭ وفات ابو عثمان المازنی۔۔۔۔۔۔٢٤٧ھ ٭ وفات المنتصر و خلافت المستعین۔۔۔۔۔۔٢٤٨ھ ٭ وفات حافظ اسحق بن بہلول التنوخی۔۔۔۔۔۔٢٥٢ھ ٭ وفات حافظ ابو بکر احمد الرمادی۔۔۔۔۔۔٢٦٥ھ ٭ زنگیوں کا واسطہ پر قبضہ۔۔۔۔۔۔٢٦٧ھ ٭ المعتمد اور الموفق میں شدید اختلاف۔۔۔۔۔۔٢٢٩ھ ٭ وفات العباس العذری البیرونی۔۔۔۔۔۔٢٧٠ھ ٭ وفات ابو العنیا ء الیصری۔۔۔۔۔۔٢٨٢ھ ٭ وفات الولید البحتری امیر الشعرائ۔۔۔۔۔۔٢٨٤ھ ٭ وفات المعتضد و خلافت المکتفی۔۔۔۔۔۔٢٨٩ھ ٭ وفات ثعلب النحوی۔۔۔۔۔۔٢٩١ھ ٭ صرف ایک دن کیلئے عبداللہ المترضیٰ خلیفہ ہوا۔۔۔۔۔۔٢٩٦ھ ٭ ابتداء دولت فاطمیہ (عبیدیہ)۔۔۔۔۔۔٢٩٧ھ ٭ وفات عبداللہ الاموی امیر اندلس ۔۔۔۔۔۔٣٠٠ھ ٭ وفات مفضل جنبی۔۔۔۔۔۔٣٠٨ھ ٭ رومیوں نے ملطیہ پر قبضہ کیا ۔۔۔۔۔۔٣١٤ھ ٭ وفات حافظ ابو نعیم الفقی ہ ۔۔۔۔۔۔ ٣٢٣ھ ٭ وفات ابن زیاد الینا پوری۔۔۔۔۔۔٣٢٤ھ ٭ سیف الدلہ بن حمدان بادشاہ ہوا۔۔۔۔۔۔٣٣٥ھ ٭ وفات ابو العباس الاثرم۔۔۔۔۔۔٣٣٦ھ ٭ وفات عماد الدولہ الدیلمی۔۔۔۔۔۔٣٣٨ھ و٭ وفات قاسم بن الاضبع القربی۔۔۔۔۔۔٣٤٠ھ ٭ رومیوں کی شکست ۔۔۔۔۔۔٣٤٣ھ ٭ وفات ابو الحسن بن علان الخرانی۔۔۔۔۔۔٣٥٥ھ ٭ وفات ابو علی القالی صاحب الامالی۔۔۔۔۔۔٣٥٦ھ ٭ وفات ابو الحسنبن القطلان ۔۔۔۔۔۔٣٥٩ھ ٭ وفات ابن العمید الوزیر۔۔۔۔۔۔٣٦٠ھ ٭ وفات المغر الفاطمی العیدی۔۔۔۔۔۔٣٦٥ھ ٭ وفات رفاء الشاعر۔۔۔۔۔۔٣٧٠ھ ٭ شرف الدولہ بر سر اقتدار آیا۔۔۔۔۔۔٣٧٦ھ ٭ وفات جوہر العقلی ۔۔۔۔۔۔٣٨١ھ ٭ وفات زاہد الوالفتح القواس۔۔۔۔۔۔٣٨٥ھ ٭ وفات میر ابو الدواد العقیلی ۔۔۔۔۔۔ ٣٨٧ھ ٭ وفات صاحب الصحاح الجوہری۔۔۔۔۔۔ ٣٩٣ھ ٭ وفات ابو الحسن بن القصار۔۔۔۔۔۔٣٩٧ھ ٭ وفات ابن ابی زمینن الالبیری۔۔۔۔۔۔٣٩٩ھ ٭ وفات الحجہ عمرو بن المکوی الاندلسی۔۔۔۔۔۔٤٠١ھ ٭ وفات ابن الیخار النحوی۔۔۔۔۔۔٤٠٢ھ ٭ وفات بہاؤ الدولہ الدیلمی۔۔۔۔۔۔٤٠٣ھ ٭ وفات ابو عبدالرحمن السلمی صاحب طبقات الصوفیہ۔۔۔۔۔۔٤١٢ھ ٭ وفات ابو الحسن التہامی الشاعری۔۔۔۔۔۔٤١٦ھ ٭ وفات ابو حازم المسعودی ۔۔۔۔۔۔ ٤١٧ھ ٭ وفات عبدالرحیم بن العجوز المغربی۔۔۔۔۔۔٤٢٠ھ ٭ وفات سلطان محمود غزنوی۔۔۔۔۔۔٤٢١ھ ٭ وفات ابو الحسن النعیمی۔۔۔۔۔۔٤٢٣ھ ٭ وفات ابو ابکر المنینی۔۔۔۔۔۔٤٢٦ھ ٭ وفات ابو علی الہاشمی ۔۔۔۔۔۔ ٤٢٨ھ ٭ وفات المعتمد الاشبیلی۔۔۔۔۔۔٤٣٣ھ ٭ وفات ابو محمد القیس۔۔۔۔۔۔٤٣٧ھ ٭ وفات معتمد الدولہ امیر موصل۔۔۔۔۔۔٤٤١ھ ٭ وفات حافظ ابن زنجویہ۔۔۔۔۔۔٤٤٧ھ ٭ وفات ابن الترجمان الصوفی۔۔۔۔۔۔٤٤٨ھ ٭ دجلہ میں سیلاب ، شہر غرق ہوگیا۔۔۔۔۔۔٤٥٤ھ ٭ وفات ابو یعلی الصابولی۔۔۔۔۔۔٤٥٥ھ ٭ وفات ابن سیدہ اللغوی۔۔۔۔۔۔٤٥٨ھ ٭ وفات ابن عبدالبر القرطبی۔۔۔۔۔۔٤٦٣ھ ٭ وفات ابن حیوس الغنوی۔۔۔۔۔۔٤٦٦ھ ٭ وفات ابو بکر الخیاط۔۔۔۔۔۔٤٦٧ھ ٭ وفات عبدالقاہر الجرحانی النحوی۔۔۔۔۔۔٤٧١ھ ٭ وفات ذدالوزارین المہدی۔۔۔۔۔۔٤٧٧ھ ٭ وفات ابو اسحق المجبال۔۔۔۔۔۔٤٨٢ھ ٭ انطاکیہ اور حمص پر صلیبی قبضہ ۔۔۔۔۔۔٤٩١ھ ٭ وفات عمید الدولہ ابو منصور الوزیر۔۔۔۔۔۔٤٩٣ھ ٭ وفات محمد بن عبدالسلام الہزار۔۔۔۔۔۔٤٩٨ھ ٭ قتل سیف الدولہ صدقہ بانی شہر حلہ۔۔۔۔۔۔٥٠١ھ ٭ وفات ابو القاسم الریفی۔۔۔۔۔۔٥٠٢ھ ٭ طرابلس پر فرنگیوں کا قبضہ۔۔۔۔۔۔٥٠٣ھ ٭ وفات خلیفہ المستظہر باللہ العباسی و خلافت المسترشد۔۔۔۔۔۔٥٢١ھ ٭ وفات علامہ ابو الوفاء الطفری صاحبِ کتاب الفنون۔۔۔۔۔۔٥١٣ھ ٭ شہادت ابو علی بن فیرہ الاندلسی۔۔۔۔۔۔٥١٤ھ ٭ وفات ابو نعیم الحداد۔۔۔۔۔۔٥١٧ھ ٭ وفات ابو احسن بن القراء الموصلی ۔۔۔۔۔۔٥١٩ھ ٭ فرنگیوں سے جنگ۔۔۔۔۔۔٥٢٣ھ ٭ وفات ابو محمد بن الاکفانی۔۔۔۔۔۔٥٢٤ھ ٭ وفات تاج الملوک دمشقی۔۔۔۔۔۔٥٢٦ھ ٭ وفات ابو بکر بن الصایغ الفلیسوف۔۔۔۔۔۔٥٣٣ھ ٭ وفات اسمٰعیل البوشیخی۔۔۔۔۔۔٥٣٦ھ ٭ وفات عمر نسفی۔۔۔۔۔۔٥٣٧ھ ٭ وفات ابو بکر بن العربی المحدث۔۔۔۔۔۔٥٤٦ھ ٭ وفات ابو العباس التجیبی صاحب کتاب النجم۔۔۔۔۔۔٥٥٠ھ ٭ وفات ابو بکر ابن الزاغونی۔۔۔۔۔۔٥٥٢ھ ٭ عبدالمؤمن کی فرنگیوں پر فتح۔۔۔۔۔۔٥٥٤ھ ٭ وفات علاؤ الدین الغوری۔۔۔۔۔۔٥٥٦ھ ٭ وفات سید الحافظ سراج الدین۔۔۔۔۔۔٥٥٧ھ ٭ وفات شیخ عبدالقادر جیلانی۔۔۔۔۔۔٥٦١ھ ٭ وفات المتنجد و خلافت المستفی۔۔۔۔۔۔٥٦٦ھ ٭ وفات حافظ ابن عساکر الدمشقی٭ ٥٧١ھ ٭ وفات الرفاء الشاعر الاندلسی۔۔۔۔۔۔٥٧٢ھ ٭ وفات صدقہ المتکلم المورخ۔۔۔۔۔۔٥٧٣ھ ٭ وفات ابو طاہر السلفی۔۔۔۔۔۔٥٧٦ھ ٭ وفات عبدالحق ابن الخراط۔۔۔۔۔۔٥٨١ھ ٭ وفت عبداللہ بن بری المقدسی۔۔۔۔۔۔٥٨٢ھ ٭ الملک العادل اور فرنگیوں کی صلح۔۔۔۔۔۔٦٠١ھ ٭ شہادت نجم الدین کبریٰ۔۔۔۔۔۔٦١٨ھ ٭ وفات ان عربی الصوفی۔۔۔۔۔۔٦٣٨ھ ٭ وفات ابن حاجب صاحب الکافیہ۔۔۔۔۔۔٦٤٦ھ ٭ وفات ہلاکو خان۔۔۔۔۔۔٦٦٣ھ ٭ وفات حمید الدین ناگوری ۔۔۔۔۔۔ ٦٧٧ھ ٭ وفات حافظ الدین النسفی۔۔۔۔۔۔٧١٠ھ ٭ حسن گنگوبہمنی بانی دولت بہمینیہ والی ہو ا ۔۔۔۔۔۔ ٧٤٧ھ ٭ وفات محب الدین القونوی۔۔۔۔۔۔٧٥٨ھ ٭ خلافت المتوکل الاول۔۔۔۔۔۔٧٦٣ھ ٭ وفات عماد فقیہ کرمانی۔۔۔۔۔۔٧٧٣ھ ٭ خلافت المتوکل الاول (دوبارہ)۔۔۔۔۔۔٧٧٩ھ ٭ ابتدائے حکومت مظفر شاہ گجراتی۔۔۔۔۔۔٧٩٣ھ ٭ تیمورلنگ نے دہلی میں داخل ہو کر تباہی پھیلائی۔۔۔۔۔۔٨٠١ھ ٭ وفات الشیخ اصلم الحنفی۔۔۔۔۔۔٨٠٢ھ ٭ وفات غیاث الدین سلطان بغداد و مظفر شاہ گجراتی۔۔۔۔۔۔٨١٣ھ ٭ وفت قاضی ابن الحسبانی و جمال الدین ابن الیونانیہ۔۔۔۔۔۔٨١٥ھ ٭ وفات سید الشریف الجرجانی۔۔۔۔۔۔٨١٦ھ ٭ وفات عزالدین ابن حجاعہ و احمد بن نشوان الحورانی۔۔۔۔۔۔٨١٩ھ ٭ وفات سلیمان بن المنجا۔۔۔۔۔۔٨٢٢ھ ٭ حکومت مبارک شاہ ثانی (دہلی)۔۔۔۔۔۔٨٢٤ھ ٭ وفت نعمت اللہ ولی۔۔۔۔۔۔٨٢٧ھ ٭ وفات شہاب الدین بن محمرہ۔۔۔۔۔۔٨٤٠ھ ٭ وفات زین الدین القادری الصوفی۔۔۔۔۔۔٨٥٦ھ ٭ وفات سید علی العجمی الحنفی۔۔۔۔۔۔٨٦٠ھ ٭ وفات قطب محمود لنگاہ۔۔۔۔۔۔٨٧٤ھ ٭ وفات علاؤالدین مصنفک۔۔۔۔۔۔٨٧٥ھ ٭ وفات قاضی یوسف الباغونی۔۔۔۔۔۔٨٨٠ھ ٭ وفات عبید اللہ احرار۔۔۔۔۔۔٨٩٦ھ ٭ وفات صدر الدین عبدالمنعم بن مفلح۔۔۔۔۔۔٨٩٧ھ ٭ وفات زین الدین زکریا الشافعی۔۔۔۔۔۔٩٢٦ھ ٭ وفات صفی الدین التربیدی۔۔۔۔۔۔٩٣٠ھ ٭ وفات قاضی نجم الدین الشافعی۔۔۔۔۔۔٩٣٥ھ ٭ وفات شمس الدین الدلجی۔۔۔۔۔۔٩٤٧ھ ٭ وفات ہمایوں ، و حکومت جلال الدین اکبر۔۔۔۔۔۔٩٦٣ھ ٭ وفات غرس الدین چلپی۔۔۔۔۔۔٩٧١ھ ٭ وفات عبدالعزیز زمزمی۔۔۔۔۔۔٩٧٦ھ ٭ وفات شمس الدین قاضی زادہ الرومی ۔۔۔۔۔۔ ٩٨٨ھ ٭ وفات اعتماد الدولہ خواجہ غیاث۔۔۔۔۔۔١٠٣٠ھ ٭ شہادت اسلام خان رومی۔۔۔۔۔۔١٠٨٧ھ ٭ خلافت مصطفی ثانی۔۔۔۔۔۔١١٠٦ھ ٭ حکومت شاہجہاں سوم(مغل)۔۔۔۔۔۔١١٧٣ھ ٭ وفات شاہ عبدالحکیم الہمدی (مردم دیدہ)۔۔۔۔۔۔١١٧٥ھ ٭ وفات میر محمد حیات حسرت عظیم آبادی۔۔۔۔۔۔١٢١٥ھ ٭ وفات امیر خاں بانی ریاست ٹونک۔۔۔۔۔۔١٢٥٠ھ ٭ خلافت عبدالمجید الاول معمار حرم۔۔۔۔۔۔١٢٥٥ھ ٭ قتل شجاع الملک امیر کابل۔۔۔۔۔۔١٢٥٨ھ ٭ وفات شیفتہؔ حسرتی ۔۔۔۔۔۔١٢٨٦ھ ٭ وفات کرامت علی جونپوری۔۔۔۔۔۔١٢٩٠ھ ٭ وفات آغا خاں اول۔۔۔۔۔۔١٢٩٨ھ ٭ وفات فخر الہ آبادی۔۔۔۔۔۔١٣٠٣ھ ٭ ہلاکت مرزا غلام احمد قادیانی۔۔۔۔۔۔١٣٢٦ھ ٭ معزولی عبدالحمید ثانی و خلافت محمد الخامس العثمانی۔۔۔۔۔۔١٣٢٧ھ ٭ وفات عماء الملک بلگرامی۔۔۔۔۔۔١٣٤٣ھ ٭ ایران میں قاچاری حکومت کا خاتمہ ہوا ۔۔۔۔۔۔١٣ ربیع الثانی ١٣٤٤ھ/٣١ اکتوبر ١٩٢٥ء ٭ وفات حکیم حبیب الرحمن ڈھاکہ۔۔۔۔۔۔١٣٦٦ھ ٭ آزادی انڈونیشیا ۔۔۔۔۔۔١٣٦٩ھ ٭ وفات سیماب اکبر آبادی۔۔۔۔۔۔١٣٧٠ھ ٭ آزادی لیبیا۔۔۔۔۔۔١٣٧١ھ ٭ وفات مفتی کفایت اللہ دہلوی۔۔۔۔۔۔١٣٧٢ھ ٭ آزادی گینی۔۔۔۔۔۔١٣٧٨ھ ٭

ماہِ ربیع الثانی میں وفات پانے والے اولیائے کرام و بزرگانِ دین رضی اللہ عنہم اجمعین


یکم ربیع الثانی:

٭ حضرت ابو سعید چشتی دست رسول ۔۔۔۔۔۔ ١٠٤٣ھ ٭ حضرت امام ابو بکر احمد بن حسین بیہقی

٢ربیع الثانی:

٭ حضرت شاہ اکرم چشتی۔۔۔۔۔۔١٠٢٦ھ

٣ ربیع الثانی:

٭ حضرت ام المؤمنین زینب بنت خزیمہ رضی اللہ عنہا۔۔۔۔۔۔٤ھ ٭ حضرت مولوی کرامت علی جونپوری۔۔۔۔۔۔١٢٩٠ھ ٭ حضرت خواجہ حبیب عجمی

٤ ربیع الثانی:

٭ حضرت سید شاہ جمال لاہوری۔۔۔۔۔۔١٠٤٩ھ

٥ ربیع الثانی:

٭ حضرت سید ابراہیم ایرجی دہلوی۔۔۔۔۔۔٩٥٣ھ ٭ حضرت قاری محمد عبدالرحمن پانی پتی۔۔۔۔۔۔١٣١٤ھ ٭ حضرت شاہ محکم الدین صاحب السیر۔۔۔۔۔۔١١٩٧ھ

٦ ربیع الثانی:

٭ حضرت شیخ عبدالکبیر پانی پتی۔۔۔۔۔۔٩٤٧ھ ٭ حضرت عارف باللہ بنڈل شاہ بابا ٭ فقیہ اعظم مولانا محمد شریف کوٹلی لوہاراں

٧ ربیع الثانی:

٭ حضرت امام المسلمین سیدنا مالک بن انس رضی اللہ تعالی عنہ ۔۔۔۔۔۔١٧٩ھ ٭ حضرت آغا محمد ترک بخاری دہلوی۔۔۔۔۔۔٧٣٩ھ ٭ حضرت امام مالک ٭ حضرت خواجہ غلام فرید

٨ ربیع الثانی:

٭ حضرت شیخ عبدالحئی چشتی جونپوری۔۔۔۔۔۔١٠٨١ھ

٩ ربیع الثانی:

٭ حضرت مفتی غلام محمد لاہوری ۔۔۔۔۔۔١٢٧٦ھ ٭ حضرت امام احمد بن حنبل ٭ حضرت علامہ مشتاق احمد نظامی الٰہ آبادی۔۔۔۔۔۔حضرت مولوی میر باز خان

١٠ربیع الثانی:

٭ حضرت ابراہیم حلبی۔۔۔۔۔۔١١٩٠ھ

١١ ربیع الثانی:

٭ حضرت شمس الدین خراسانی۔۔۔۔۔۔٤٥٧ھ ٭ حضرت ابو سعید علی معروف بہ مبارک مخزومی واسطی۔۔۔۔۔۔٥١٣ھ ٭ حضرت امام عبدالغنی ملتانی۔۔۔۔۔۔٥٤٣ھ ٭ حضرت شخ بہاؤالدین جونپوری رزق کشا ۔۔۔۔۔۔٩٦٣ھ ٭ حضرت سید شاہ حسین گیلانی لاہوری۔۔۔۔۔۔١٢٠٥ھ ٭ حضرت سید شاہ محمد بن سید عثمان ۔۔۔۔۔۔١٠١١ھ ٭ حضرت سید حاجی عبداللہ گیلانی۔۔۔۔۔۔١١٤١ھ ٭ ضرت مولانا شاہ محمد وارث رسول نما بنارسی۔۔۔۔۔۔١١٦٣ھ ٭ حضرت محبوب سبحانی شیخ سید عبدالقادر جیلانی رضی اللہ عنہ،

١٢ ربیع الثانی:

٭ حضرت شیخ عبداللہ برقی خوارزمی۔۔۔۔۔۔٣٧٦ھ ٭ حضرت شیخ امان عرف عبدالملک۔۔۔۔۔۔٩٧٥ھ ٭ حضرت شاہ جمال۔۔۔۔۔۔١٠٠٠ھ ٭ حضرت شیخ جمال اللہ نوشاہی۔۔۔۔۔۔١١٤٢ھ ٭ حضرت سید گدا رحمن بن محبوب علی معشوق صفات ۔۔۔۔۔۔٩٨٧ھ

١٣ربیع الثانی:

٭ حضرت سید موسی جون۔۔۔۔۔۔٢١٣ھ ٭ حضرت ابو سالم شاذلی۔۔۔۔۔۔٥٤٧ھ ٭ حضرت سید نور الدین مبارک غزنوی۔۔۔۔۔۔٦٣٢ھ ٭ حضرت میاں عبدالحئی حیدرآبادی۔۔۔۔۔۔١١٧١ھ ٭ حضرت خواجہ غلام محمد تونسوی

١٤ربیع الثانی:

٭ حضرت ابو اسحق مغربی۔۔۔۔۔۔٤٦١ھ ٭ حضرت سید حسن شاہ ۔۔۔۔۔۔ ٦٩٩ھ ٭ حضرت خضر رومی ٧٤٦ھ ٭ حضرت شیخ عبدالحمید گنگوہی۔۔۔۔۔۔٩٨٥ھ ٭ حضرت شاہ محمد ماہ قلندر دہلوی۔۔۔۔۔۔١٠٠٠ھ ٭ حضرت شاہ شمس سبزواری ملتانی ٭ حضرت شاہ گدا رحمن

١٥ ربیع الثانی:

٭ حضرت شاہ مجتبیٰ عرف مجا قلندر لاہر پوری۔۔۔۔۔۔١٠٨٤ھ ٭ حضرت شاہ منور علی قادری عمر دراز۔۔۔۔۔۔١١٩٩ھ ٭ حضرت سیدنا شاہ مصطفی حیدر حسن میاں

١٦ ربیع الثانی:

٭ حضرت خواجہ بدر الدین غزنوی۔۔۔۔۔۔٦٥٧ھ ٭ ٭ حضرت ابو القاسم قیشری ٭ حضرت میاں موج دریا بخاری

١٧ ربیع الثانی:

٭ حضرت شیخ ابو الفضل جوہری۔۔۔۔۔۔٣١٩ھ ٭ حضرت عبداللہ محمد بن ابراہیم قریشی بغدادی۔۔۔۔۔۔٥٩٩ھ ٭ حضرت شیخ محمد بن یقوب سوسی دمشقی۔۔۔۔۔۔٦٠٧ھ ٭ حضرت حاجی شرف الدین ۔۔۔۔۔۔٧٠٧ھ ٭ حضرت سید شمس الدین بغدادی ۔۔۔۔۔۔ ٧٧١ھ ٭ حضرت شیخ مجتبیٰ گوہر قلندر۔۔۔۔۔۔١٠٥٧ھ ٭ حضرت میراں موج دریا لاہوری٭ حجرت سید محمد شاہ دُولہ سبزواری

١٨ ربیع الثانی:

٭ حضرت سلطان الاولیاء خواجہ نظام الدین اولیا محبوب الٰہی دہلوی۔۔۔۔۔۔٧٢٥ھ ٭ حضرت شیخ نور الدین نور قطب عالم پنڈوی۔۔۔۔۔۔٨١٣ھ ٭ حضرت قاضی محمد صدر الدین ہزاروی

١٩ ربیع الثانی:

٭ حضرت شیخ الاسلام ابو اسمعیل خواجہ عبداللہ انصاری۔۔۔۔۔۔٤٨١ھ ٭ حضرت مولوی قطب الہدیٰ رائے بریلوی۔۔۔۔۔۔١٢٢٦ھ ٭ حضرت شیخ شریف بدرالدین حسن مغربی۔۔۔۔۔۔٥٤٩ھ ٭ حضرت شیخ نصیر الدین بلخی۔۔۔۔۔۔٧٥٦ھ ٭ حضرت سید یٰسۤن بغدادی۔۔۔۔۔۔٧٩٨ھ ٭ حضرت شیخ بہکہاری عرف نظام الدین کاکوروی ۔۔۔۔۔۔ ٩٨١ھ ٭ ٭ حضرت علامہ مولانا نور الدین عبدالرحمن جامی السامی ٭ حضرت شاہ دولہا دریائی گجراتی

٢٠ ربیع الثانی:

٭ حضرت شاہ حمید ابدال۔۔۔۔۔۔١٠٦١٠ھ ٭ حضرت شاہ محمد کاظم قلندر۔۔۔۔۔۔١٢٤١ھ

٢١ ربیع الثانی:

٭ حضرت ملا حسین واعظ کاشقی۔۔۔۔۔۔٩١٠ھ ٭ حضرت شیخ محب اللہ چشتی صابری۔۔۔۔۔۔١٠٥٨ھ

٢٢ ربیع الثانی:

٭ حضرت شیخ محی الدین ابن عربی للخاطب الشیخ اکبر۔۔۔۔۔۔٦٣٨ھ ٭ حضرت مخدوم شیخ احمد گجراتی۔۔۔۔۔۔٨٨٠ھ ٭ حضرت شاہ عبدالرحمن نگرامی

٢٣ربیع الثانی:

٭ حضرت شیخ مجد الدین بغدادی۔۔۔۔۔۔٦٦١ھ ٭ حضرت خواجہ عبدالشہید نقشبندی۔۔۔۔۔۔٩٨٢ھ ٭ حضرت مولانا ابو الاحیاء محمد نعیم قادری رزاقی لکھنوی ۔۔۔۔۔۔ ١٣١٨ھ

٢٤ ربیع الثانی:

٭ حضرت خواجہ کلیم اللہ جہان آبادی۔۔۔۔۔۔١١٤٢ھ ٭ حضرت شرف الدین ابو اسحق شامی۔۔۔۔۔۔٣٢٩ھ

٢٥ ربیع الثانی:

٭ حضرت شیخ حمزہ دہر سوی۔۔۔۔۔۔٩٥٧ھ ٭ مولوی حکیم محمد قطب الدین جھنگوی۔۔۔۔۔۔١٣٧٩ھ ٭ حضرت حافظ محمد صاحب قادری عمر زئی پشاوری

٢٦ ربیع الثانی:

٭ مولوی علی محمد جماعتی۔۔۔۔۔۔١٣٨٦ھ ٭ ٭ حضرت سیدنا شاہ اولاد رسول مارہروی

٢٧ ربیع الثانی:

٭ حضرت ابو سعید اعرابی ۔۔۔۔۔۔٣٦٢ھ ٭ حضرت ابو سلیمان احمد خطابی (صاحب معالم السنن)۔۔۔۔۔۔٣٨٨ھ ٭ حضرت خواجہ داؤد طائی

٢٨ ربیع الثانی:

٭ حضرت شاہ اجمل سنبھلی (بھارت)

٢٩ ربیع الثانی:

٭ حضرت شیخ فرید الدین عطار نیشاپوری۔۔۔۔۔۔٦٢٧ھ ٭ حضرت شیخ حمید الدین صوفی ناگوری۔۔۔۔۔۔٦٧٣ھ

٣٠ ربیع الثانی:

٭ حضرت سید جمال الدین احمد ہانسوی۔۔۔۔۔۔٦٥٩ھ ٭ حضرت شیخ جمال الدین احمد جورقانی۔۔۔۔۔۔٦٦٩ھ
 

 
HOME | MASJID E HABIB Q/A | SPEECHES | ABOUT US | CONTACT US

Copyright © 1999-2014 All Rights Reserved.